انسان زندگی میں روتا ہے تو صرف ایک وجہ سے ؟

انسان دوسرے انسان کو جو سب سے بڑا تحفہ عطا کرسکتا ہے وہ وقت ہے اس سے قیمتی تحفہ اور کوئی نہیں ہوسکتا۔بچوں کے چہروں پر اس لئے اتنا نور ہوتا ہے کہ وہ شرارتیں کرتے ہیں سازشیں نہیں۔ کچھ لوگ جب روتے ہیں تو اس لئے نہیں کہ وہ کمزور ہوتے ہیں بلکہ اس لئے کہ مضبوط رہتے رہتے تھک جاتے ہیں ۔

ہر عمل سوچ سمجھ کر کرو کیونکہ ہر عمل کے اندر اس کا انجام یوں چھپا ہوتا ہے جیسے ہر بیج کے اندر درخت۔ انسان سب کچھ بھول سکتا ہے سوائے ان لمحوں کے جب اسے اپنوں کی ضرورت تھی اور وہ دستیاب نہیں تھے ۔کچھ چیزیں بہت دیر بعد بھی پلٹ کر آجاتی ہیں خصوصا کسی کو دیا ہوا دھوکا اور بولا ہوا جھوٹ۔

کسی کو اگنور کرنے کی وجہ یہ نہیں ہوتی کہ آپ اسے ناپسند کرتے ہیں بلکہ ان سے بات کرنے کی وجہ سے پیدا ہونے والے فساد سے ڈرتے ہیں ۔کبھی کبھی اچھے لوگوں سے بھی غلطیاں ہوجاتی ہیں لیکن اس کا مطلب ہر گز نہیں ہے

وہ برے لوگ ہیں بلکہ یہ مطلب ہے کہ وہ بھی انسان ہیں۔ہار مان لینا کمزوری نہیں ہے اس کے برعکس یہ طاقت ہے۔ ہار ماننے سے بندہ کھولتے پانی میں رہنے سے بچ جاتا ہے اور محفوظ جگہ پر رہنا شروع کردیتا ہے۔جب ہر شخص کچھ بننے کی کوشش کرتا ہے تو کچھ نہ بنو۔ خالہ پن کے دائرے میں آجاؤ۔ انسان کو ایک برتن کی طرح ہونا چاہئے۔ خالی پن سے انس کرو۔

جیسا کہ برتن اپنے اندرونی خالی پن سے قائم ہوتا ہے اسی طرح انسان اپنی کچھ نہ ہونے کے علم سے قائم ہے۔ایک اچھا انسان کسی سے شکایت نہیں کرتا وہ خامیاں تلاش نہیں کرتا۔خوشی خالص اور صاف پانی کی طرح ہے جہاں جہاں یہ بہتا ہے حیرت انگیز طور پر شاندار شگوفے کھلتے ہیں۔غم ایک سیاہ سیلاب کی مانند ہے جہاں جہاں یہ بہتا ہے شگوفوں کو کھلا دیتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.