دعا زہرا کیس کون سچا کون جھوٹا! کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے، کچھ پوشیدہ پہلو

دعا زہرہ کیس اور اس میں ہر روز ہونے والی تبدیلی کے سبب یہ کیس عوام کی نظروں سے غائب نہیں ہو پا رہا ہے۔ جب اس کے والد نے اس کی گمشدگی کے بارے میں بتایا تو سب لوگوں کو محسوس ہوا کہ جب دعا مل جائے گی تو معامہ ختم ہو جائے گا مگر اس کے بعد اس کے نکاح نامے کے ساتھ سامنے آنے پر لگا کہ کیس ختم ہو جائے گا-

مگر والدین کے اصرار کے بعد محسوس ہوا کہ شائد اب جب لڑکی برآمد کروا کر کراچی آجائے گی اور کورٹ میں پیش ہو جائے گی تو بات ختم ہو جائے گی مگر کراچی میں بھی کورٹ میں دعا کے بیان کے بعد کہ وہ اپنے شوہر کے ساتھ رہنا چاہتی ہے محسوس ہوا کہ سب کچھ کلئیر ہو گيا ہے- مگر اس کے والدین کا اصرار کہ دعا نے ان کے ساتھ رہنے کی بات کی اس نے کیس مزید الجھا دیا-

اور اب کورٹ سے باہر انٹرویوز کا ایک سلسلہ شروع ہو گیا ہے جس میں دعا نے اپنے شوہر کے ساتھ ایک انٹرویو میں ہنستے کھیلتے بتایا کہ وہ اپنے شوہر کے ساتھ خوش ہے تو دوسری جانب اس کی ماں نے رو رو کر ایک اور انٹرویو دے دیا جس میں اس کا کہنا تھا کہ اس کی بچی کے ساتھ زبردستی کی جا رہی ہے اور ایسا انٹرویو پلانٹ کیا گیا ہے-

اس سارے معاملے کے کچھ پہلو ایسے ضرور ہیں جو کہ اس کیس کو فالو کرنے والے لوگوں کو پریشان کر رہے ہیں ان کے بارے میں ہم آپ کو آج بتائيں گے-

دعا نے اپنے حالیہ انٹرویو میں اس بات کا اقرار کیا ہے کہ اس کی ظہیر سے پہلی ملاقات لاہور پہنچنے پر ہی ہوئی تھی۔ کیا یہ بات ماننے والی ہے کہ کسی ایسے انسان کے لیے جس سے آپ کبھی پہلے ملے تک نہ ہوں اس کے لیے اپنا گھر بار سب چھوڑ کر خالی ہاتھ گھر سے نکل پڑیں اور ایک شہر سے دوسرے شہر اس کم عمری میں سفر کریں؟ اس کی یہ بات سن کر محسوس ہو رہا ہے کہ کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے-

اگر دعا اتنی ہی سچی ہیں تو پھر صرف زنیرا ماہم نامی یو ٹیوبر کو انٹرویو کیوں دیا باقی بھی بہت سارے چینلز ان کے انٹرویو کے لیے مرے جا رہے ہیں یہ جوڑا ان کو انٹرویو کیوں نہیں دے رہا ہے- کیا اس کا سبب یہ ہے کہ ان کو محسوس ہو رہا ہے کہ باقی لوگ ان کے سامنے بال کی کھال نکالیں گے اور ایسا کچھ پوچھ لیں گے جس کا جواب دینا ان کے لیے ممکن نہیں ہوگا-

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.