شوق دا کوئی مول نہیں،103 سالہ خاتون نےطیارے سے چھلانگ لگادی

شوق دا کوئی مول نہیں،103 سالہ خاتون نےطیارے سے چھلانگ لگادی

سوئیڈن(ویب ڈیسک) سوئیڈن سے تعلق رکھنے والی 103 سالہ خاتون نےچلتے طیارے سے ہزاروں فٹ بلندی سے چھلانگ لگا کراپنا شوق بھی پورا کرلیا اور ایک نیاعالمی ریکارڈ بھی قائم کردیا۔ سوئیڈن کی خبر رساں ایجنسی ٹی ٹی کے مطابق دادی رُت لارسن ہزاروں فٹ بلندی پر محو پروار طیارے سے چھلانگ لگانے کے بعد کام

یابی سے زمین پر اتر گئیں۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ’یہ میرے لیے بہت پرمسرت تجربہ رہا، اس کے بارے میں طویل عرصے سے سوچ رہی تھی اور آخر کار میں نے اپنی دیرینہ خواہش کو پورا کر ہی لیا۔‘ لارسن کا مزید کہنا تھا کہ بڑھاپے کی وجہ سے میں فضا سے زمین کے خوبصورت نظارے سے لطف اندوز نہیں ہوسکی لیکن یہ سب بہت خوبصورت تھا۔، میں کسی آزاد پرندے کی طرح ہوا میں تیر رہی تھی۔ زمین پرلارسن کے پوتے پوتیوں اور دیگر اہل خانہ نے اس منظرکو کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کرلیا۔ جب کہ گینیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کے حکام نے بھی اس پورے کارنامے کو ریکارڈ کیا اور اس عالمی ریکارڈ کی تصدیق کی۔ واضح رہے کہ اس سے قبل طیارے سے زمین سے چھلانگ لگانے والی معمر ترین خاتون کی عمر 103 سال اور 181 دن تھی۔ جب کہ لارسن نے اس ریکارڈ کو 103 سال 259 دن کی عمر میں قائم کیا ہے۔دوسری جانب امریکی جنونی شخص نے اپنے بدن پر مزید 20 سے 30 ٹیٹو بنواکر اپنے ریکارڈ کو مزید وسعت دی ہے۔ انہیں دنیا بھر میں سب سے سے زیادہ ٹیٹو بنوانے والے شخص کا اعزاز 2014 میں ہی مل چکا تھا لیکن اب وہ ان کی تعداد بڑھا رہے ہیں۔ میٹ گون ویسے بھی بہت لحیم شحیم ہیں اور اپنے بدن کو ایک کینوس بناچکے ہیں۔ حال ہی میں انہوں نے ایک گنیز ٹیٹو بھی بنایا ہے۔ تاہم 2014 کے بعد انہوں نے دو سے تین درجن نئے ٹیٹو کی جگہ نکالی ہے اور پیٹھ پر کچھ ممالک کے ٹیٹو بنوائے ہیں۔ تاہم اپنی ٹانگ کی پشت پر انہوں نے گنیز بک کی تعریف اور احترام میں ایک خاص ٹیٹو بھی گُدوایا ہے۔ ریاست اوریگن کے شہر پورٹ لینڈ سے تعلق رکھنے والی میٹ پیدائش کے بعد ہی ایک نایاب بیماری کے شکار تھے۔

انہیں ’پولینڈ سنڈروم‘ کا مرض لاحق تھا جس میں بدن کے ایک طرف کے پٹھے یا مسل نہیں بن پاتے اور یوں انہوں نے اپنی خامی کو چھپانے کے لیے ٹیٹو بنوانے شروع کئے۔ اب یہ حال ہے کہ ان کے بدن کے 95 فیصد حصے پر ٹیٹو بنے ہیں اور درمیان میں انہوں نے چوکور ٹیٹو بنوانے میں غیرمعمولی دلچسپی لی جو ان کے لیے گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کا حصہ بن چکے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.